GW TV

Gujranwala Based News

بلاگ

کورونا کا تجربہ ، ایک تلخ حقیقت

20 مئی کو دفتر میں کام کرتے ہوئے اچانک سردی محسوس ہوئی ساتھ بخار ہوگیا، کچھ دیر بعد کھانسی اور گلے میں خراش کے ساتھ درد محسوس ہوگیا اورجسم نے بتایا کہ میری بس ہوگئی..
21 مئی کو میرے ڈاکٹر اسد امتیاز صاحب نے کرونا ٹیسٹ ایڈوائس کر دیا، چغتائی لیب کو سیمپل دیا، شام تک مزید تیز بخار اور جسم درد شروع ہوگیا، جسم درد ایسا کہ کوئی چھری کے ساتھ بوٹیاں نوچ رہا ہوں، ناقابل برداشت……
23 مئی کی دوپہر تقریباً 4 بجے آنلائن رپورٹ چیک کی، رپورٹ پازیٹو…..
ڈاکٹر اسد امتیاز صاحب کی ہدائت کے مطابق سیدھا سول ہسپتال رپورٹ کی، ہسپتال والوں نے الکرم مارکی بھجوا دیا.
24 مئی عید والے دن، سانس خراب اور تیز بخار کے ساتھ الٹیاں، مارکی والوں نے سول ہسپتال ریفر کر دیا، جو کہ 26 مئی تک آئسولیشن وارڈ میں آکسیجن کے ساتھ گزارے، (خون میں آکسیجن کی مقدار 80 سے 82 تک تھی) 27 کو آکسیجن سے جان. چھوٹی اور سرجیکل وارڈ جو کہ نارمل وارڈ تھی،
الحمدللہ، آج مورخہ 8 جون تک ادھر ہی رہا اور صحت دن بہ دن بہتر سے بہتر ہوتی گئی،
مورخہ 4 اور 6 جون کو میرے دوبارہ ٹیسٹ لیئے گئے جو کہ الحمدللہ نیگیٹو آئے
آج مورخہ 8 جون کو گھر آگیا،
الحمدللہ ثم الحمداللہ

اگر کوئی بھائی، بہن کرونا کا شکار ہوچکا ہو اور اس کو پلازمہ کی ضرورت ہے، تو بندہ ناچیز حاضر ہے، کچھ دنوں کے بعد میں ڈونیٹ کر سکتا ہوں، میرا بلڈ گروپ O پازیٹو ہے

نوید رحمت جنجوعہ
0323 9100600

LEAVE A RESPONSE

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

×