GW TV

Gujranwala Based News

گوجرانوالہ

ایس ایچ او لدھیوالا وڑائچ مشتاق احمد پولیس کی بدنامی کا باعث بننے لگا

گوجرانوالہ: پولیس کی جانب بیگناہ شہری کوحوالات میں بند کرنے پراہل خانہ احتجاج کررہے ہیں جبکہ دوسری جانب بیگناہ شہری لقمان کی فائل فوٹو

ایس ایچ او مشتاق احمدمحکمہ پولیس کی بدنامی کا باعث بننے لگا
تھانہ میں ٹائوٹ مافیا کی بھرتی شروع ‘شرفاء کی پگڑیاں اچھالنا معمول بنا لیا’علاقہ مکین
گوجرانوالہ(بیورورپورٹ)ایس ایچ او لدھیوالا وڑائچ مشتاق احمد پولیس کی بدنامی کا باعث بننے لگا’تھانہ میں ٹائوٹ مافیا کی بھرتی شروع کر دی ‘شرفاء کی پگڑیاں اچھالنا معمول’انصاف دلایا جائے ‘اہل خانہ’تفصیلات کے مطابق تھانہ لدھیوالا وڑائچ کے محلہ کوٹ قاضی کے رہائشی محنت کش لقمان ولد محمد سرور جو گوجرانوالہ میں نجی فیکٹری میں محنت مزدوری کرتا ہے کے گھر میں گزشتہ روز پولیس کے اہلکاروں نے شریف شہری لقمان کو گرفتار کر لیا جس پر علاقہ مکینوں نے وجہ دریافت کی تو بتایا گیا کہ آپ کا بیٹا سنگین جرائم میں ملوث ہے اس لیے ایس ایچ او مشاق احمد کے حکم پر گرفتار کرنے آئے ہیں اور آپ تھانے میں آجائیں کا کہہ کر لقمان کو گاڑی میں بٹھا کر لے گئے تھوڑی دیر بعد گھر والے اور اہل خانہ تھانہ میں پہنچے تو بتایا گیا کہ آپ کا بیٹاہماری حراست میں نہیں بوڑھے والدین کو پورا دن تھانے کے چکر لگواتے ہوئے ذلیل خوار کیا گیاجس پر اہل خانہ کی جانب سے سی پی او رات10بجے کال کی اور اہل خانہ نے کہا کہ ہمیں خدشہ ہے کہ ہمارے بچے کو جان سے مار دیا جائیگا برائے مہربانی ہمارے بچے بازیاب کروایا جائے تو سی پی او کی مداخلت کے بعد ایس ایچ او نے ایک مہران گاڑی میں لقمان کو بٹھا تھانے میں لایا گیا’اہل خانہ نے پولیس کیخلاف احتجاج کرتے ہوئے میڈیا کو بتایا کہ پولیس کے محافظ ہی مخالفین کے کہنے پر ہمارے بچے کی جان کے دشمن بن گئے ہیں اور سارا دن میڈیا اور ورثاء ایس ایچ او سے کہتے رہے مگر ایس ایچ او اپنا مئوقف دینے سے انکاری رہا اور اب بھی ہمیں سنگین نتائج کی دھمکیاں دی جارہی ہیں کہ آپکے دوسرے بچوں کو بھی ہم نے اٹھانا ہے جس کے لیے ورثان کی طرف سے سیشن جج گوجرانوالہ کو حراسمنٹ کی درخواست دائر کر دی گئی ہے۔علاقہ مکینوں نے بتایا کہ لقمان انتہائی شریف اورمحنت مزدوری کرنیوالا شہری ہے بلاوجہ بااثر نوسرباز اور فراڈئیے افتخار مہر ولد ولی محمدمہر کی آشیربادپر جھوٹے مقدمات میں پھنسانے کی دھمکیاں دیکر بلیک میل کر رہا ہے جبکہ وہ اس سے قبل بھی متعدد شہریوں پر جھوٹے مقدمات درج کروا کر پیسے بٹورتا ہے اور ذرائع سے پتہ چلا ہے کہ ایک ڈکیت گروہ کی سرپرستی بھی کرتا ہے۔علاقہ مکینوں اور اہل خانہ نے وزیراعلیٰ پنجاب’آئی جی پنجاب’آر پی او اور سی پی او سے اپیل کی ہے کہ راشی وکرپٹ ایس ایچ او مشتاق احمدکیخلاف قانونی کاروائی کی جائے۔

LEAVE A RESPONSE

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

×